ہم نے تصادم کی راہ اختیار نہیں کی، ہمارے ساتھ

سابق وزیراعظم نواز شریف کی لندن واپسی کے فوری بعد پنجاب ہاؤس اسلام آباد میں لیگی رہنماؤں سے مشاورتی بیٹھک لگی، اجلاس میں ملکی سیاسی صورتحال، نیب ریفرنسز میں...

سابق وزیراعظم نواز شریف کی لندن واپسی کے فوری بعد پنجاب ہاؤس اسلام آباد میں لیگی رہنماؤں سے مشاورتی بیٹھک لگی، اجلاس میں ملکی سیاسی صورتحال، نیب ریفرنسز میں فرد جرم عائد ہونے اور احتساب عدالت میں پیشی سے متعلق امور پر تبادلہ خیال کیا گیا۔ پارٹی رہنماؤں سے گفتگو کرتے ہوئے نواز شریف کا کہنا تھا کہ ہم نے کوئی تصادم کی راہ اختیار نہیں کی، ہمارے ساتھ تصادم کیا گیا، مائنس ون ٹو کے حوالے سے کوئی ڈکٹیشن قبول نہیں کی جائے گی، ہم اقتدار نہیں اقدار کی سیاست پر یقین رکھتے ہیں، ناکوئی بے اصولی کی ہے نا کوئی ایسا کام کریں گے، اصولوں پر کھڑے ہیں دیکھنا یہ ہے کہ اصولوں سے ہٹا کون ہے، اب اصولی فیصلے کرنے کا وقت آگیا ہے، جس کا اطلاق سب پر ہو گا،، ہر ایک کو پارٹی فیصلوں کی پباندی کرنا ہو گی، جو بھی فیصلے کریں گے ان پر قائم رہنا پڑے گا، نواز شریف کا کہنا تھا کہ ہم نے ہمشہ عدالتوں کا احترام کیا، بہت ہو گیا ملک کو نقصان نہیں پہنچنے دیں گئے، وہ مقدمات کا سامنا کرنے کے لیے دوبارہ پاکستان آئے ہیں، وہ جھوٹے مقدمات سے گھبرانے والے نہیں، عوام دو ہزار اٹھارہ میں ایک بار پھر مسلم لیگ (ن) پر اعتماد کا اظہار کریں گے, ذرائع کے مطابق پارٹی کے سینئر رہنماؤں نے مشاورتی عمل تیز اور وسیع کرنے کا مشورہ بھی دیا، نواز شریف نے ہدایت کی کہ حکومت اپنے اہداف کی تکمیلی پر توجہ دے،،، ہزارہ موٹروے پر کام کی رفتار تیز ہونی چاہیے، توانائی اور ایل این جی منصوبے بھی جلد مکمل کیے جائے

Loading...
Categories
مزید

RELATED BY