Urdu Khabrain
Urdu Khabrain is the world most populated Urdu News website. You can find and read daily Urdu news.

انڈیا: پچاس کروڑ افراد کے لیے ہیلتھ انشورنس کا اعلان

0 5

Get real time updates directly on you device, subscribe now.

حکومت نے آئندہ مالی سال میں غریب لوگوں کے لیے 51 لاکھ مکان اور دو کروڑ ٹائلٹ تعمیر کرنے کا بھی اعلان کیا ہے
انڈیا میں وفاقی حکومت نے اعلان کیا ہے کہ ملک میں دس کروڑ غریب خاندانوں کو ہیلتھ انشورنس فراہم کی جائے گی۔

وزیر اعظم نریندر مودی کی حکومت کا آخری مکمل بجٹ پیش کرتے ہوئے وزیر خزانہ ارون جیٹلی نے کہا کہ اس سکیم کے تحت ہر خاندان کو پانچ لاکھ روپے سالانہ کی مفت انشورنس ملے گی اور پچاس کروڑ لوگ اس سے فیض یاب ہوں گے۔

ملک میں آئندہ برس پارلیمانی انتخابات ہونے ہیں اور بجٹ کی تجاویز سے یہ صاف ظاہر ہے کہ حکومت کسانوں اور غریب عوام کو یہ پیغام دے رہی ہے کہ اس کی ترجیحات کی فہرست میں وہ سب سے اوپر ہیں۔

بجٹ کے بعد وزیر اعظم نے کہا کہ دیہی علاقوں اور زراعت کے لیے بجٹ میں ساڑھے چودہ لاکھ کروڑ روپے مختص کیے گئے ہیں جو ایک ریکارڈ ہے
مفت بیمے کی سکیم کی تفصیلات ابھی واضح نہیں ہیں لیکن یہ ان غریب لوگوں کے لیے بہت بڑی خبر ہے جو خستہ حال سرکاری ہسپتالوں اور پرائیویٹ علاج کے مہنگے خرچ کی وجہ سے مناسب علاج نہیں کرا پاتے۔ حکومت نے ڈیڑھ لاکھ ہیلتھ سینٹر قائم کرنے کا بھی اعلان کیا ہے جہاں مفت دوائیں اور زچگی کی سہولیات دستیاب کرائی جائیں گی۔

حکومت نے آئندہ مالی سال میں غریب لوگوں کے لیے 51 لاکھ مکان اور دو کروڑ ٹائلٹ تعمیر کرنے کا بھی اعلان کیا ہے۔

ارون جیٹلی نے اپنی تقریبا دو گھنٹے کی تقریر میں کہا کہ کسانوں کو درپیش مسائل کا حکومت کو احساس ہے اور ان کی فصل کا انہیں مناسب معاوضہ دیاجائے گا اور اب حکومت کسانوں کو ان کی فصل کے لیے لاگت کی ڈیڑھ رقم ادا کرے گی۔

Related Posts
1 کا 21

بجٹ کے بعد وزیر اعظم نے کہا کہ دیہی علاقوں اور زراعت کے لیے بجٹ میں ساڑھے 14 لاکھ کروڑ روپے مختص کیے گئے ہیں جو ایک ریکارڈ ہے۔ انڈیا میں گذشتہ چند برسوں میں کسانوں کی آمدنی کم ہوئی ہے اور حکومت کو اس الزام کا بھی سامنا ہے کہ وہ روزگار کے نئے مواقع پیدا کرنے میں ناکام رہی ہے۔
مسٹر جیٹلی نے کہا کہ حکومت صرف بزنس کی راہ ہی آسان نہیں بنانا چاہتی بلکہ اس کی کوشش لوگوں کی زندگیاں بہتر بنانے کی ہے۔
لیکن وزیر خزانہ نے کہا کہ حکومت کے تخمینوں کے مطابق معیشت جلدی ہی تقریباً آٹھ فیصد کی رفتار سے ترقی کرے گی اور روزگار کے زیادہ مواقع پیدا کرنے کے لیے بھی تدابیر کی گئی ہیں۔ فی الحال انڈیا کی معیشت حجم کے لحاظ سے ایشیا میں تیسرے نمبر پر ہے لیکن رواں مالی سال میں ترقی کی رفتار ساڑھے چھ فیصد سے کچھ زیادہ رہی ہے۔

ماہرین کے مطابق 2016 میں اچانک بڑے نوٹ بند کرنے کے فیصلے اور مال اور خدمات پر ٹیکس (جی ایس ٹی) کے اطلاق میں مسائل کی وجہ سے ترقی کی رفتار متاثر ہوئی ہے۔

حکومت نے نوکری پیشہ لوگوں کی انکم ٹیکس کی شرحوں میں کوئی تبدیلی نہیں کی ہے۔

مسٹر جیٹلی نے دفاع کے بجٹ کا براہ راست کوئی ذکر نہیں کیا لیکن پہلے سے ہی یہ قیاس آرائی تھی کہ دفاعی بجٹ میں کوئی اضافہ نہیں کیا جائے گا۔

حکومت کے مطابق رواں مالی سال میں بجٹ خسارہ تین اعشاریہ پانچ فیصد رہا لیکن آئندہ برس میں اسے کم کرکے تین اعشاریہ تین فیصد کیا جائے گا۔

مسٹر جیٹلی نے کہا کہ حکومت صرف بزنس کی راہ ہی آسان نہیں بنانا چاہتی بلکہ اس کی کوشش لوگوں کی زندگیاں بہتر بنانے کی ہے۔

Get real time updates directly on you device, subscribe now.

Loading...